کد خبر ۵۴۶ انتشار : ۳۰ اردیبهشت ۱۳۹۵ ساعت ۰۷:۰۴
شیخ حمزہ احمد موسی

شیخ زکزاکی کا زندہ رہنا ایک معجزہ ہے: شیخ حمزہ احمد موسی

شیخ زکزاکی کو کئی گولیاں لگی تھیں اور انکے ہڈیاں ٹوٹی تھیں مگر ہسپتال نے معجزانہ طور پر کہا کہ انکی حالت بہتر ہے اور حکومت کو بھی لگا کہ یہ معجزہ ہی ہوسکتا ہے۔

رپورٹ کے مطابق شیخ حمزہ احمد موسی نے کہا کہ شیخ زکزاکی پر حملے کے بعد چالیس دن تک ہمیں انکے حوالے سے کوئی اطلاع نہ تھی اور کیی دن تک وہ بے ہوش رہے تھے اسی وجہ سے فوج اور بوکوحرام کے حامیوں نے انکے گھر اور مدرسے پر حملہ کرکے سب کچھ جلا دیا تھا کہ اب شیخ ختم ہوچکے ہیں اور شیعوں کا کام تمام ہوچکا ہے مگر پندرہ دن بعد اس کے باوجود کہ شیخ زکزاکی کو کئی گولیاں لگی تھیں اور انکے ہڈیاں ٹوٹی تھیں مگر ہسپتال نے معجزانہ طور پر کہا کہ انکی حالت بہتر ہے اور حکومت کو بھی لگا کہ یہ معجزہ ہی ہوسکتا ہے۔

انکا کہنا تھا کہ بعد میں علما نے ان سے ملاقات کی مگو جو بھی گیا روتا ہوا واپس آیا کیونکہ انکی حالت بہت ناگفتہ تھی اور انکی بائیں آنکھ ضائع ہوچکی تھی۔

احمد موسی کا کہنا ہے کہ حکومت انتظار کررہی ہے کہ شیعوں کی جانب سے کوئی قدم اٹھے اور انکو بہانہ ملے اور ان پر حملہ شروع کرے مگر شیعہ امن سے رہ رہے ہیں اور ان ایام میں لوگ زیادہ تعداد میں در مکتب اہل بیت پر آرہے ہیں کیونکہ انہوں نے دیکھا کہ یہ لوگ عوام کی کسقدر مدد کرتے ہیں اور پھر بھی ان پر ظلم کیا جاتا ہے۔

.......

اخبار مرتبط :

    اخرین اخبار